﴿شوّال کا مہینہ

نئے قمری مہینہ کا آغاز

ماہ شوال کے اعمال

                یکم شوال کی رات با برکت راتوں میں سے ہے، اس کی فضیلت، بیداری، عبادت اور ثواب سے متعلق بہت سی احادیث وارد ہوئیں ہیں ، حضرت رسول ﷺسے مروی ہے کہ یہ رات مرتبے میں شب قدر سے کچھ کم نہیں اور اس میں چند ایک اعمال ہیں

(۱) غروب آفتاب کے وقت غسل کرے ۔

(۲) شب بیداری یعنی نماز، دعا، استغفار اور خدا سے طلب حاجات کرتے ہوئے مسجد میں جاگ کر رات گزارے۔

(۳) نماز مغرب ، عشاء، فجر اور نماز عید کے بعد یہ تکبیریں پڑھے:

خدا بزرگتر ہے خدا بزرگتر ہے الله کے سوا کوئی معبود نہیں خدا بزرگتر ہے خدا بزرگتر ہے اور خدا کیلئے حمد ہے حمد ہے خدا کیلئے اس پر کہ ہمیں ہدایت دی

اوراس کا شکر ہے اس پر جو کچھ اس نے ہمیں بخشا۔

اَللهُ أَکْبَرُ اللهُ أَکْبَرُ لاَ إِلہَ إِلاَّ اللهُ وَاللهُ أَکْبَرُ اللهُ أَکْبَرُ وَ لِلّٰہِ الْحَمْدُ الْحَمْدُ لِلّٰہِ عَلَی مَا ھَدانا ،

وَلَہُ الشُّکْرُ عَلَی مَا أَوْلانا

(۴) نماز مغرب فرائض و نافلہ کے بعد ہاتھوں کو بلند کر کے کہے:

اے فضل و احسان والے اے عطا کرنے والے اے حضرت محمد کو منتخب کرنے والے اور ان کے حامی محمد و آل محمد پر

رحمت نازل فرمااور میرے تمام گناہ بخش دے جو تیرے ہاں شمار ہو چکے ہوں کہ وہ اس کھلی کتاب میں درج ہیں جو تیرے پاس ہے۔

یَا ذَا الْمَنِّ وَالطَّوْلِ، یَا ذَا الْجُودِ، یَا مُصْطَفِیَ مُحَمَّدٍ وَناصِرَہُ صَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ

وَآلِ مُحَمَّدٍ وَاغْفِرْ لِی کُلَّ ذَنْبٍ أَحْصَیْتَہُ وَھُوَ عِنْدَکَ فِی کِتابٍ مُبِینٍ

اس کے بعد سجدے میں جاکر سو مرتبہ کہے: اَتُوْبُ اِلَی اللهِ پس اب خدا سے جو حاجت بھی طلب کرے انشاء الله پوری ہوگی۔شیخ نے روایت کی ہے کہ نماز مغرب سے فراغت کے بعد سجدے میں جائے اور یہ پڑھے:

اے حرکت دینے والے اے سخاوت والے اے حضرت محمد کو منتخب کرنے والے اور ان کے حامی محمد و آل(ع) محمد پر رحمت نازل فرما

اور میرے وہ سبھی گناہ بخش دے جو میں نے کئے اور انہیں بھول گیا ہوں اور وہ گناہ تیری روشن کتاب میں درج ہیں

یَا ذَا الْحَوْلِ یَا ذَا الطَّوْلِ یَا مُصْطَفِیاً مُحَمَّداً وَناصِرَہُ صَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِ مُحَمَّدٍ وَاغْفِرْ لِی 

کُلَّ ذَنْبٍ أَذْنَبْتُہُ وَنَسِیتُہُ أَنَا وَھُوَ عِنْدَکَ فِی کِتابٍ مُبِینٍ

اسکے بعد سو مرتبہ کہے:

 خدا کے حضور توبہ کرتا ہوں

 اَتُوْبُ اِلَی اللهِ

(۵) امام حسین (ع)کی زیارت پڑھے ۔ کہ اس کی فضیلت بہت زیادہ ہے اور آج کی رات امام حسین(ع) کی مخصوص زیارت باب زیارت میں آئے گی ۔               

(۶) شب جمعہ کے اعمال میں مذکورہ دعا یا دائم الفضل ۔۔۔۔۔ دس مرتبہ پڑھے ۔

(۷) دس رکعت نماز پڑھے جس کا ذکر ماہ رمضان کی آخری شب کے اعمال میں ہو چکا ہے ۔

(۸) دو رکعت نماز ادا کرے جس کی پہلی رکعت میں سورۃ الحمد کے بعد ایک ہزار مرتبہ سورۃ توحید پڑھے، اور دوسری رکعت میں سورۃ الحمد کے بعد ایک مرتبہ سورۃ توحید پڑھے نماز کا سلام دینے کے بعد سر سجدے میں رکھے اور سو مرتبہ کہے

خدا کے حضور توبہ کرتا ہوں

أَتُوبُ إِلَی اللهِ

پھر کہے :

 اے احسان و عطا والے اے احسان وبخشش والے اے حضرت محمد ﷺ کو منتخب وبرگزیدہ

کرنے والے محمد اور ان کی آل(ع) پر رحمت نازل فرما اور میرے لئے یہ اور یہ کردے 

 یَا ذَا الْمَنِّ وَالْجُودِ، یَا ذَا الْمَنِّ وَالطَّوْلِ، یَا مُصْطَفِیَ مُحَمَّدٍ صَلَّی اللهُ

عَلَیْہِ وَآلِہِ صَلِّ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِہِ وَافْعَلْ بِی کَذا وَکَذاوَافْعَلْ بِی کَذا کی بجائے اپنی حاجت طلب کرے۔

                 روایت ہے کہ امیر المؤمنین (ع)یہ نماز اسی طریقے سے بجالاتے تھے اور جب سر سجدے سے اٹھاتے تو فرماتے کہ اس خدا کے حق کی قسم جس کے قبضہ قدرت میں میری جان ہے جو بھی شخص یہ نماز پڑھ کر خدا سے اپنی کوئی حاجت طلب کرے گا تو وہ یقینا پوری ہوگی اور اسکے گناہ اگر ریت کے ذرات کے برابر بھی ہوں تو معاف کر دیئے جائیں گے۔ایک اور روایت میں اس نماز کی پہلی رکعت میں ایک ہزار کی بجائے ایک سو مرتبہ سورۃ توحید پڑھنے کا ذکر آیا ہے لیکن اس صورت میں اس نماز کو نافلہ مغرب کے بعد بجا لانا ہوگا۔ شیخ و سید نے اس نماز کے بعد پڑھنے کے لیے یہ دعا نقل کی ہے:

اے اللہ اے اللہ اے اللہ اے بڑے مہربان اے اللہ اے بڑے رحم والے اے اللہ اے بادشاہ اے اللہ اے پاکیزہ اے اللہ اے کامل اے اللہ اے امن

 دینے والے اے اللہ اے نگہدار اے اللہ اے غالب اے اللہ اے دبدبہ والے اے اللہ اے بڑائی والے اے اللہ اے بنانیوالے اے اللہ اے پیدا کرنے

 والے اے اللہ اے صورت بنانیوالے اے اللہ اے جاننے والے اے الله اے بزرگی والے اے اللہ اے دانا اے اللہ اے کرم کرنے والے اے اللہ

اے بردبار اے اللہ اے حکمت والے اے اللہ اے سننے والے اے اللہ اے دیکھنے والے اے اللہ اے نزدیک اے اللہ اے قبول کرنے والے اے

اللہ اے بہت عطا والے اے اللہ اے شان والے اے اللہ اے دوست اے اللہ اے وفاوالے اے اللہ اے حاکم اے اللہ اے فیصلہ کرنے والے

 اے اللہ اے تیزتر اے اللہ اے سخت گیر اے اللہ اے مہربانی والے اے اللہ اے نگہبان اے اللہ اے بزرگی والے اے اللہ اے نگہدار اے اللہ اے

گھیرنے والے اے اللہ اے سرداروں کے سردار اے اللہ اے اول اے الله اے آخر اے الله اے ظاہراے الله اے باطن اے اللہ اے فخر والے اے اللہ

اے غلبہ والے اے اللہ اے پروردگار اے اللہ اے پروردگار اے دوستی والے اے اللہ اے روشن اے اللہ اے بلند کرنے والے

 اے اللہ اے روکنے والے اے اللہ اے ہٹانے والے اے اللہ اے کھولنے والے اے اللہ اے نفع پہنچانے والے اے اللہ اے بزرگ اے اللہ اے

زیبا اے اللہ اے گواہ اے اللہ اے مشاہدہ کرنے والے اے اللہ اے فریاد رس اے اللہ اے دوست اے اللہ اے پیدا کرنے والے اے اللہ اے پاکیزہ

 اے اللہ اے بادشاہ اے اللہ اے تقدیر بنانے والیاے اللہ اے بند کرنے والے اے اللہ اے کھولنے والے اے اللہ اے زندہ کرنے والے اے اللہ اے

 موت دینے والے اے اللہ اے اٹھانے والے اے اللہ اے ورثہ والے اے اللہ اے عطا کرنے والے اے اللہ اے فضل کرنے والے اے اللہ اے نعمت

دینے والے اے اللہ اے حق اے اللہ اے آشکار کرنے والے اے اللہ اے پاکیزہ اے اللہ اے احسان کرنے والے اے اللہ اے نیکی کرنے والیاے اللہ اے آغاز

کرنے والے اے اللہ اے لوٹانے والے اے اللہ اے پیدا کرنے والے اے اللہ اے نیا کام کرنے والے اے اللہ اے رہنما اے اللہ اے پورا کرنے والے اے اللہ

اے شفا دینے والے اے اللہ اے بلند مرتبہ اے اللہ اے بڑائی والے اے اللہ اے محبت والے اے اللہ اے احسان والے اے الله اے نعمت والے اے اللہ اے بلندی

والے اے اللہ اے عدل کرنے والے اے اللہ اے بلندیوں والے اے اللہ اے راست گو اے اللہ اے بہت راست گو اے اللہ اے بدلہ لینے والے اے اللہ اے بقاوالے

اے اللہ اے نگہدار اے اللہ اے جلالت والے اے اللہ اے عزت والے اے اللہ اے پسندیدہ اے اللہ اے بندگی کیے گئے اے اللہ اے بنانے

 والے اے اللہ اے مدد کرنے والے اے اللہ اے وجود دینے والے اے اللہ اے کام کرنے والے اے اللہ اے باریک بین اے اللہ اے بہت معاف

 کرنے والے اے اللہ اے قدردان اے اللہ اے روشن اے اللہ اے قدرت والے اے اللہ اے پروردگار اے اللہ اے پروردگار اے اللہ اے پروردگار

 اے اللہ اے پروردگار اے اللہ اے پروردگار اے اللہ اے پروردگار اے اللہ اے پروردگار اے اللہ اے پروردگار اے اللہ اے پروردگار اے اللہ

اے پروردگار اے اللہ میں تجھ سے سوال کرتا ہوں کہ محمد اور آل(ع) محمد پر رحمت نازل فرما اور اپنی رضا کے ذریعے مجھ پراحسان فرما

اپنی بردباری کے ساتھ مجھے معاف کر اور مجھ پر اپنے حلال وپاکیزہ رزق میں فراخی کردے جہاں سے مجھے رزق ملنے کی توقع ہے اور جہاں سے مجھے رزق

 ملنے کی توقع نہیں ہے پس میں تیرا بندہ ہوں اور تیرے سوا میرا کوئی نہیں اور نہ تیرے سوا کوئی اور ہے جس سے مانگوں اے سبسے زیادہ رحم کرنے والے

 وہی ہوتا ہے جو اللہ چاہے نہیں کوئی قدرت لیکن وہی جو بزرگ وبرتر خدا سے ملتی ہے اے اللہاے اللہ اے اللہ اے پروردگار اے پروردگار

 اے پروردگار اے برکتوں کے نازل کرنے والے تجھی سے ہر حاجت برآتی اور پوری ہوتی ہے سوال کرتا ہوں تجھ سے بواسطہ ہر ایک نام کے جو تیرے

ہاں خزانہ غیب میں ہے اور بواسطہ ان معروف ناموں کے جو تیرے ہاں عرش کے پردوں پر تحریر و نقش کیے ہوئے ہیں سوالی ہوں کہ تو حضرت محمد اور آل محمد

پر رحمت نازل فرما اور یہ کہ میری طرف سے ماہ رمضان کی عبادت قبول کر لے اور تو مجھے اپنے محترم گھر کعبہ کا حج ادا کرنے والوں میں لکھ دے اور تو میرے

بڑے بڑے گناہوں کو معاف کرے اور تو میرے لیے اپنے ان گنت خزانے کھولے اے بہت مہربان ۔

یَااللهُ یَااللهُ یَا اللهُ،یَارَحْمنُ یَااللهُ،یَارَحِیمُ یَا اللهُ، یَا مَلِکُ یَا اللهُ، یَا قُدُّوسُ یَا اللهُ یَا سَلامُ یَا اللهُ،

یَامُؤْمِنُ یَااللهُ، یَا مُھَیْمِنُ یَا اللهُ، یَا عَزِیزُ یَا اللهُ، یَا جَبّارُ یَا اللهُ، یَا مُتَکَبِّرُ، یَا اللهُ، یَا خالِق،ُ یَا اللهُ،

یَا بارِیَ،ُ یَا اللهُ، یَا مُصَوِّرُ، یَا اللهُ یَا عالِمُ یَا اللهُ، یَا عَظِیمُ یَا اللهُ، یَا عَلِیمُ یَا اللهُ، یَا کَرِیمُ یَا اللهُ

یَا حَلِیمُ یَا اللهُ یَا حَکِیمُ یَا اللهُ، یَا سَمِیعُ یَا اللهُ، یَا بَصِیرُ یَا اللهُ، یَا قَرِیبُ یَا اللهُ، یَا مُجِیبُ یَااللهُ

یَاجَوادُ یَااللهُ یَاماجِدُ یَااللهُ،یَامَلِیُّ یَا اللهُ، یَا وَفِیُّ یَا اللهُ، یَا مَوْلَی یَا اللهُ یَا قاضِی یَا اللهُ، یَا سَرِیعُ

یَااللهُ،یَاشَدِیدُ یَااللهُ، یَا رَؤُوفُ یَا اللهُ، یَا رَقِیبُ یَا اللهُ یَا مَجِیدُ یَا اللهُ، یَا حَفِیظُ یَا اللهُ، یَا مُحِیطُ

یَا اللهُ، یَا سَیِّدَ السّاداتِ یَا اللهُ، یَا أَوَّلُ یَا اللهُ، یَا آخِرُ یَا اللهُ، یَا ظاھِرُ یَا اللهُ، یَا باطِنُ یَا اللهُ، یَا

فاخِرُ یَا اللهُ یَا قاھِرُ یَا اللهُ یَا رَبّاہُ یَا اللهُ یَا رَبّاہُ یَا اللهُ، یَا رَبّاہُ یَا اللهُ، یَا وَدُودُ یَا اللهُ، یَا نُورُ یَااللهُ

یَارافِعُ یَا اللهُ یَا مانِعُ یَا اللهُ، یَا دافِعُ یَا اللهُ، یَا فاتِحُ یَا اللهُ، یَا نَفَّاحُ یَا اللهُ یَا جَلِیلُ یَا اللهُ یَا جَمِیلُ

یَا اللهُ، یَا شَھِیدُ یَا اللهُ، یَا شاھِدُ یَا اللهُ، یَا مُغِیثُ یَا اللهُ، یَا حَبِیبُ یَا اللهُ، یَا فاطِرُ یَا اللهُ، یَا مُطَہِّرُ

یَااللهُ،یَامَلِکُ یَااللهُ، یَامُقْتَدِرُ یَا اللهُ، یَا قابِضُ یَا اللهُ، یَا باسِطُ یَا اللهُ، یَا مُحْیِی یَا اللهُ، یَا مُمِیتُ

یَا اللهُ،یَا باعِثُ یَا اللهُ، یَا وارِثُ یَا اللهُ، یَا مُعْطِی یَا اللهُ، یَا مُفْضِلُ یَا اللهُ، یَا مُنْعِمُ یَا اللهُ، یَا حَقُّ

یَا اللهُ،یَا مُبِینُ یَا اللهُ، یَا طَیِّبُ یَا اللهُ، یَا مُحْسِنُ یَا اللهُ، یَا مُجْمِلُ یَا اللهُ، یَا مُبْدِیَُ یَا اللهُ، یَا مُعِیدُ

یَااللهُ، یَابارِیُ یَااللهُ، یَابَدِیعُ یَااللهُ، یَاہادِی یَا اللهُ، یَا کافِی یَا اللهُ، یَا شافِی یَا اللهُ، یَا عَلِیُّ یَا اللهُ،

یَاعَظِیمُ یَااللهُ، یَاحَنّانُ یَا اللهُ، یَا مَنَّانُ یَا اللهُ، یَا ذَا الطَّوْلِ یَا اللهُ، یَا مُتَعالِی یَا اللهُ، یَا عَدْلُ یَا اللهُ،

یَا ذَا الْمَعارِجِ یَا اللهُ، یَا صادِقُ یَا اللهُ، یَا صَدُوقُ یَا اللهُ، یَا دَیَّانُ یَا اللهُ، یَا باقِی یَا اللهُ

یَا واقِی یَا اللهُ، یَا ذَا الْجَلالِ یَا اللهُ، یَا ذَا الْاِکْرامِ یَا اللهُ، یَا مَحْمُودُ یَا اللهُ یَا مَعْبُودُ یَا اللهُ،

یَا صانِعُ یَا اللهُ، یَا مُعِینُ یَا اللهُ، یَا مُکَوِّنُ یَا اللهُ، یَا فَعّالُ یَا اللهُ، یَا لَطِیفُ یَا اللهُ، یَا غَفُورُ

یَا اللهُ، یَا شَکُورُ یَا اللهُ، یَا نُورُ یَا اللهُ، یَا قَدِیرُ یَا اللهُ، یَا رَبَّاہُ یَا اللهُ، یَا رَبَّاہُ یَا اللهُ، یَا رَبَّاہُ یَا اللهُ،

یَا رَبَّاہُ یَا اللهُ، یَا رَبَّاہُ یَا اللهُ، یَا رَبَّاہُ یَا اللهُ، یَا رَبَّاہُ یَا اللهُ، یَا رَبَّاہُ یَا اللهُ، یَا رَبَّاہُ یَا اللهُ،

یَارَبّاہُ یَا اللهُ، أَسْأَ لُکَ أَنْ تُصَلِّیَ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِ مُحَمَّدٍ وَتَمُنَّ عَلَیَّ بِرِضاکَ،وَتَعْفُوَ عَنِّی 

بِحِلْمِکَ،وَتُوَسِّعَ عَلَیَّ مِنْ رِزْقِکَ الْحَلالِ الطَّیِّبِ وَمِنْ حَیْثُ أَحْتَسِبُ وَمِنْ حَیْثُ لاَ أَحْتَسِبُ،

فَإِنِّی عَبْدُکَ لَیْسَ لِی أَحَدٌ سِواکَ، وَلاَ أَحَدٌ أَسْأَلُہُ غَیْرُکَ،یَا أَرْحَمَ الرّاحِمِینَ، مَا شاءَ اللهُ

لاَ قُوَّةَ إِلاَّ بِاللهِ الْعَلِیِّ الْعَظِیمِ پھر سجدے میں جائے اور کہے: یَا اللهُ یَا اللهُ یَا اللهُ، یَا رَبُّ یَا رَبُّ یَا رَبُّ،

یَا مُنْزِلَ الْبَرَکاتِ بِکَ تُنْزَلُ کُلُّ حاجَةٍ، أَسْأَ لُکَ بِکُلِّ اسْمٍ فِی مَخْزُونِ الْغَیْبِ عِنْدَکَ وَ

الْاَسْماءِ الْمَشْھُورَةِ عِنْدَکَ الْمَکْتُوبَةِ عَلَی سُرادِقِ عَرْشِکَ أَنْ تُصَلِّیَ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِ

مُحَمَّدٍ وَأَنْ تَقْبَلَ مِنِّی شَھْرَ رَمَضانَ، وَتَکْتُبَنِی مِنَ الْوافِدِینَ إِلی بَیْتِکَ الْحَرامِ، وَتَصْفَحَ

لِی عَنِ الذُّنُوبِ الْعِظامِ، وَتَسْتَخْرِجَ لِی یَا رَبِّ کُنُوزَکَ یَا رَحْمنُ ۔

(۹)چودہ رکعت نماز بجا لائے کہ ہر رکعت میں سورۃ الحمدو آیة الکرسی کے بعد تین مرتبہ سورۃ توحید پڑھے تاکہ اسے ہر رکعت کے بدلے میں چالیس سال کی عبادت کا ثواب ملے نیز اس شخص کے برابر مزید ثواب بھی حاصل ہو کہ جس نے ماہ رمضان کے پورے روزے رکھے ہوں اور عبادت کی ہو۔

(۱۰)مصباح میں شیخ کا فرمان ہے کہ آخر شب غسل کرکے اتنی عبادت کرے کہ صبح صادق ہوجائے۔

پہلی شوال کا دن :یہ عیدالفطر کا دن ہے اور اس میں چند ایک اعمال ہیں:

(۱)نماز فجر کے بعد اور نماز عید کے بعد وہ تکبیریں پڑھے جو شب عید کے اعمال میں ذکر ہوچکی ہیں

(۲)وہ دعا پڑھے جسے سید نے نماز فجر کے بعد پڑھنے کا کہا ہے اور شیخ کا فرمان ہے کہ اسے نماز عید کے بعد پڑھے:

اے معبود! میں اپنے رہبر حضرت محمد کے وسیلے سے تیرے حضور آیا ہوں

 اَللَّھُمَّ اِنِّی تَوَجَّھْتُ اِلَیْکَ بِمُحَمَّدٍ اَمَامِی الخ

(۳)نماز عیدسے قبل گھر کے ہر چھوٹے بڑے فرد کی طرف سے زکات فطرہ ادا کرے کہ جس کی مقدار فی کس ایک صاع یعنی ۲/۱ ۳چھٹانک جنس یا اس کی قیمت بتائی گئی ہے، اس کی تفصیل کے لیے کتب فقہ کی طرف رجوع کرنا چاہیئے۔واضح رہے کہ زکات فطرہ واجب مؤکد ہے جو ماہ مبارک کے روزوں کی قبولیت اور سال آئندہ تک حفظ وامان کا سبب ہے۔ خدا نے سورۃ اعلیٰ میں زکات کا ذکر نماز سے پہلے کیا ہے:

کامیاب ہؤا وہ جس نے زکوٰة دی اور اپنے پروردگار کو یاد کیا پھر نماز پڑھی۔

 قَدْ اَفْلَحَ مَنْ تَزَکّٰی وَذَکَر اسْمَ رَبِّہِ فَصَلّٰی

                اس سے ظاہر ہے کہ زکات فطرہ کا نماز عید سے پہلے ادا کرنا ضروری ہے:

(۴)غسل کرے اور بہتر ہے کہ نہر میں غسل کیا جائے۔ اس کا وقت طلوع فجر سے نماز عید پڑھنے سے قبل تک ہے۔

                 شیخ فرماتے ہیں کہ یہ غسل چھت کے نیچے کرنا زیادہ مناسب ہے، غسل کرتے وقت یہ کہے:

اے معبود! تجھ پر ایمان رکھتا ہوں تیری کتاب کی تصدیق کرتا ہوں اور تیرے نبی حضر ت محمد ﷺ کی سنت و روش کا پیروکار ہوں

 اَللّٰھُمَّ اِیْمَاناً بِکَ وَتَصْدِیْقاً بِکِتَابِکَ وَ اِتِّبَاعَ سُنَّةِ نَبِیِّکَ مُحَمَّدٍ صَلیٰ الله عَلَیْہِ وَآلِہ

بسم الله پڑھ کر غسل شروع کرے اور غسل کے بعد کہے:

 اے معبود! اس غسل کو میرے گناہوں کا کفارہ بنا اور میرے دین کوپاک فرما

اے معبود! مجھ سے ناپاکی کو دور کردے

  اَللَّھُمَّ اجْعَلْہُ کَفَّارَةً لِذُنُوْبِیْ وَطَھِّرِ دِیْنِی

اَللَّھُمَّ اِذْھَبْ عَنِّی الدَّنَسَ

(۵)عمدہ لباس پہنے اور خوشبو لگائے۔ مکہ مکرمہ کے سوا کسی اور مقام پر ہو تو نماز عید صحرا میں کھلے آسمان تلے ادا کرے

(۶)نماز عید سے پہلے دن کے آغاز میں افطار کرے اور بہتر ہے کہ کھجور یا مٹھائی سے ہو، شیخ مفید(علیہ الرحمہ) فرماتے ہیں کہ افطار میں تھوڑی سی خاک شفا کھائے تو وہ ہر بیماری سے شفا کا موجب بنے گی۔

(۷)جب نماز عیدکیلئے تیار ہوکر طلوع آفتاب کے بعد گھرسے نکلے اور وہ دعائیں پڑھے جو سید نے کتاب اقبال میں نقل کی ہیں اس ذیل میں ابو حمزہ ثمانی نے امام محمد باقر (ع)سے روایت کی ہے کہ عید فطر، عید قربان اور جمعہ کے روز جب نماز کے لیے نکلے تو یہ دعا پڑھے:

اے معبود! جو شخص آمادہ ہے آج کے دن یا کمر بستہ ہے یا تیاری کرتا اور تیار ہوتا ہے لوگوں کی طرف جانے کیلئے اس امید سے کہ ان

سے نقدی چیزیں بخششیں اور عطائیں لے لیکن اے میرے آقا میری تیاری میری آمادگی اور میری ساری کوشش تیری طرفآنے میں ہے کہ میں

امیدوار ہوں تیری عطا تیرے انعام تیری عنائتوں تیرے احسانوں تیری مہربانیوں اور بخششوں کا اور آج صبح کی ہے میں نے ایک عید کے دن جو تیرے

نبی محمد کہ خدا کی رحمتیں ہوں ان پر اور ان کی آل(ع) پر کی امت کی عیدوں میں سے ہے اور میں آج تیرے حضور کوئی صالح عمل لے کر نہیں آیا ہوں جسکو یقینی طور

پر پیش کروں نہ کسی مخلوق کی طرف توجہ اور امید رکھتا ہوں ہاں مگر تیری جناب میں عاجز بن کر اپنے گناہوں اور خطاؤں کا اقراری ہوکر آیا ہوں تو اے عظمت

والے اے عظمت والے اے عظمت والے بخش دے میرے بڑے بڑے گناہوں کو کیونکہ تیرے سوا کوئی نہیں ہے جو بڑے بڑے گناہوں کو بخشتا ہو

تیرے سوا کوئی معبود نہیں ہے اے سب سے زیادہ رحم والے۔

 اَللّٰھُمَّ مَنْ تَھَیَّأَ فِی ھذَا الْیَوْمِ أَوْ تَعَبَّأَ أَوْ أَعَدَّ وَاسْتَعَدَّ لِوِفادَةٍ إِلی مَخْلُوقٍ رَجاءَ رِفْدِہِ وَنَوافِلِہِ

وَفَواضِلِہِ وَعَطایَاہُ فَإِنَّ إِلَیْکَ یَا سَیِّدِی تَھْیِئَتِی وَتَعْبِیئَتِی وَ إِعْدادِی وَاسْتِعْدادِی رَجاءَ رِفْدِکَ

وَجَوایِزِکَ وَنَوافِلِکَ وَفَواضِلِکَ وَفَضائِلِکَ وَعَطایاکَ وَقَدْ غَدَوْتُ إِلی عِیدٍ مِنْ أَعْیادِ

أُمَّةِ نَبِیِّکَ مُحَمَّدٍ صَلَواتُ اللهِ عَلَیْہِ وَعَلَی آلِہِ وَلَمْ أَفِدْ إِلَیْکَ الْیَوْمَ بِعَمَلٍ صالِحٍ أَثِقُ بِہِ

قَدَّمْتُہُ وَلاَ تَوَجَّھْتُ بِمَخْلُوقٍ أَمَّلْتُہُ وَلکِنْ أَتَیْتُکَ خاضِعاً مُقِرّاً بِذُ نُوبِی وَ إِسائَتِی إِلی نَفْسِی،

فَیا عَظِیمُ یَا عَظِیمُ یَاعَظِیمُ اغْفِرْ لِیَ الْعَظِیمَ مِنْ ذُ نُوبِی، فَإِنَّہُ لاَ یَغْفِرُ الذُّنُوبَ الْعِظامَ إِلاَّ أَنْتَ

یَا لاَ إِلہَ إِلاَّ أَ نْتَ یَا أَرْحَمَ الرَّاحِمِینَ ۔

(۸)نماز عیددو رکعت ہے، پہلی رکعت میں سورۃ الحمد کے بعد سورۃ اعلیٰ پڑھے اور پانچ تکبیریں کہے کہ ہر تکبیر کے بعد یہ قنوت پڑھے:

بارالہا بزرگیوں کا اور بڑائی کا مالک تو ہے اور بخشش کا اور دبدبے کا مالک تو ہے درگزر اور مہربانی کا مالک تو ہے

میں پناہ و پردہ پوشی کا سوال کرتا ہوں میں بواسطہ آج کے دن کے جس کو تو نے مسلمانوں کیلئے، محمد ﷺکیلئے عید قرار دیا

اسے سرمایہ اور اضافہ کادن بنایا ہے آج محمد وآل محمد پر رحمت نازل فرما اور یہ کہ داخل کر مجھے ہر اس نیکی میں جس میں تو نے

محمد وآل(ع) محمد کو داخل کیا اور یہ کہ دور کردے مجھے ہر اس بدی سے جس سے تو نے محمد و آل محمد کو دور

رکھا تیری رحمتیں ہوں آنحضرت پر اور انکی آل پر اے معبود! میں سوال کرتاہوں تجھ سے ہر اس بھلائی کا جس کاسوال تجھ سے تیرے نیک بندوں نے کیا اور

 پناہ لیتا ہوں تیری جس سے تیرے نیکوکاربندوں نے پناہ چاہی ہے ۔

 اَللّٰھُمَّ أَھْلَ الْکِبْرِیاءِ وَالْعَظَمَةِ، وَأَھْلَ الْجُودِ وَالْجَبَرُوتِ، وَأَھْلَ الْعَفْوِ وَالرَّحْمَةِ وَأَھْلَ التَّقْوی 

وَالْمَغْفِرَةِ،أَسْأَلُکَ بِحَقِّ ھذَا الْیَوْمِ الَّذِی جَعَلْتَہُ لِلْمُسْلِمِینَ عِیداً وَلِمُحَمَّدٍ صَلَّی اللهُ عَلَیْہِ

وَآلِہِ ذُخْراً وَمَزِیداً أَنْ تُصَلِّیَ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِ مُحَمَّدٍ وَأَنْ تُدْخِلَنِی فِی کُلِّ خَیْرٍ أَدْخَلْتَ فِیہِ

مُحَمَّداً وَآلَ مُحَمَّدٍ، وَأَنْ تُخْرِجَنِی مِنْ کُلِّ سُوءٍ أَخْرَجْتَ مِنْہُ مُحَمَّداً وَآلَ مُحَمَّدٍ صَلَواتُکَ

عَلَیْہِ وَعَلَیْھِمْ ۔ اَللّٰھُمَّ إِنِّی أَسْأَ لُکَ خَیْرَمَا سَأَلَکَ عِبادُکَ الصَّالِحُونَ، وَأَعُوذُ بِکَ مِمَّا

اسْتَعاذَ مِنْہُ عِبادُکَ الصَّالِحُونَ۔

                پھر چھٹی تکبیر کہہ کررکوع و سجود کرے۔دوسری رکعت میں سورۃ الحمد کے بعد سورۃ الشمس پڑھے اور چار تکبیریں کہے ، ہر تکبیر کے بعد وہی قنوت پڑھے اور پانچویں تکبیر کہہ کر رکوع و سجود کرے اور تشہد و سلام کے بعد تسبیح فاطمہ (سلام اللہ علیھا) پڑھے:نماز عید کے بعد پڑھنے کی بہت سی دعائیں منقول ہیں اور ان میں سب سے بہتر صحیفہ کاملہ کی چھیالیسویں دعا ہے۔ مستحب ہے کہ نماز عید زیر آسمان ایسی زمین پرپڑھے، جس کا فرش نہ کیا گیا ہو۔نماز کے بعد گھر واپس آتے ہوئے اس راستے سے نہ آئے، جس سے نماز کے لیے گیا تھا اس روز اپنے لیے اور اپنے دینی بھائیوں کیلئے جو دعا بھی مانگے گا قبول ہوگی۔

(۹)امام حسین (ع)کی زیارت پڑھے:       

(۱۰)دعاء ندبہ پڑھے کہ جس کا ذکرباب زیارت میں آئے گا، سید ابن طاؤس کہتے ہیں کہ یہ دعاء پڑھنے کے بعد سجدے میں سر رکھے اور کہے:

 تیری پناہ لیتا ہوں آگ سے جو بجھائی نہیں جا سکتی اور اس کی تازگی مان نہیں پڑتی اور جس کی پیاس دور نہیں ہوتی

 أَعُوذُ بِکَ مِنْ نارٍ حَرُّھا لاَ یُطْفأ وَجَدِیدُھا لاَ یَبْلی وَعَطْشانُھا لاَیُرْوی

اب دایاں رخسار رکھے اور کہے:

اے معبود! میرے چہرے کو آگ میں نہ الٹ پلٹ جبکہ میں نے سجدے کیے اور تیرے لیے اسے خاک پر رگڑا ہیکہ اس میں تجھ پر میرا

 إِلھِی لاَ تُقَلِّبْ وَجْھِی فِی النَّارِ بَعْدَ سُجُودِی وَتَعْفِیرِی لَکَ بِغَیْرِ مَنٍّ مِنِّی عَلَیْکَ بَلْ لَکَ الْمَنُّ عَلَیَّ

پھر بایاں رخسار رکھے اور کہے:

 کوئی احسان نہیں بلکہ یہ مجھ پر تیرا احسان ہے رحم فرما اس پر جس نے بدی و نافرمانی کی اور وہ بے چارہ اس کا اعتراف کرتا ہے

 اِرْحَمْ مَنْ أَساءَ وَاقْتَرَفَ وَاسْتَکانَ وَاعْتَرَفَ

 اور پھر سجدہ میں جائے اور کہے:

 اگر میں ایک برا بندہ ہوں پس تو یقینا اچھا پروردگار ہے تیرے بندے سیبڑے بڑے گناہ ہوئے ہیں تو بھی تیری طرف

سے بہترین پردہ پوشی ہی ہونی چاہیئے

  إِنْ کُنْتُ بِئْسَ الْعَبْدُ فَأَنْتَ نِعْمَ الرَّبُّ عَظُمَ الذَّنْبُ مِنْ عَبْدِکَ فَلْیَحْسُنِ الْعَفْوُ

مِنْ عِنْدِکَ یَا کَرِیمُ

 پھر سو بار کہے:

 اے مہربان معافی، معافی۔

اَلْعَفْوُ اَلْعَفْوُ

                 اس کے بعدسید ابن طاوس فرماتے ہیں :اور اپنے اس روز عید کو کھیل کود اور بے کار باتوں میں نہ گزاریں کہ تجھے نہیں معلوم آیا تیرے اعمال رد ہوئے یا قبول ہوئے ہیں پس اگر تجھے ان کے قبول ہونے کی امید ہے تو اس پر تجھے بہترین طریقے سے شکر ادا کرنا چاہیئے اور اگر تجھے اعمال کے رد ہونے کا ڈر ہے تو تجھے اس پر گہرے غم میں ڈوبے رہنا چاہیئے۔

پچیسویں شوال کا دن

                ۲۵ شوال ۱۴۸ھ امام جعفر صادق (ع)کی تاریخ وفات ہے بعض کا قول ہے کہ حضرت کی وفات ۱۵ رجب کو ہوئی۔ جب کہ آپ کو انگور میں زہر دیا گیا تھا۔ایک روایت میں ہے کہ بوقت وفات آپ نے آنکھیں کھولیں اور فرمایا کہ میرے سب عزیزوں کو جمع کرو، جب سارے عزیز آگئے تو آپ نے ان کی طرف دیکھتے ہوئے فرمایا: میری شفاعت اس شخص کے لیے نہیں ہوگی جو نماز کو اہمیت نہ دے اور اس کی پروا نہ کرے۔

شوّال کے اہم ایّام 

It is mustahab (recommended )to fast  From the 4th up to the 9th of the month of Shawwal

Night of Eid ul fitr

Eid Ul fitr 1st

6th ‐ Battle of Hunnain ‐ (6 A.H.) 5th‐Arrival of Hazrat Muslim ibn‐e‐Aqeel(a.s.) in Kufa ‐ (60 A.H.)
8th - Youm e inhidame Janat ul Baqi (Medina cemetery demolition in 1925)
9th ‐ Battle of Ahzab/Khandaq ‐ (5 A.H.) 9th- Beginning of Ghaibat e Kubra
12th Death of Shaikh Bahai 1030 Ah 13 th - Splitting of moon by Prophet (saws)
13 th - Birth Shaeed saani 13 th -  Death Syed Borujerdi
14th Death Syed Abdul Azeem Hassani 23rd ‐ Battle of Ohod & Martyrdom of Hazrat Hamza (a.r.) ‐ (3 A.H.)
18th - Marriage of Prophet (saw) with Lady Khadija
25th ‐ Martyrdom of Imam Jafer Sadiq(a.s.) 6th Imam  (148 A.H.)   | Salwaat
28th death Ayt Jawad tabrizi 29th death Ayt Wahid Behbahani
30th ‐ Death of Hazrat Ibrahim (a.s.) son of Prophet Mohammad(saw)  (10 A.H.)
مفاتیح انڈیکس پر جایئں ہوم پیج پر جایئں قرآن انڈیکس پر جایئں
محرم صفر ربیع الاول رجب شعبان رمضان ذی القعد ذی الحج

 براہ مہربانی  اپنی  تجاویز  یہاں بھیجیں  

اس سائٹ کا کاپی رائٹ نہیں ہے